قونصل جنرل رچرڈ ایچ رائیلی

 قونصل جنرل رچرڈ ایچ رائیلی

رچرڈ ایچ رائیلی نے پشاور میں امریکی قونصل جنرل کے طور پر اپنی ذمہ داریاں سنبھال لیں۔

قونصل جنرل رائیلی پیشہ ور سفارت کار ہیں اور ان کا عہدہ منسٹر قونصلر کے مساوی ہے۔

پاکستان میں اپنی حالیہ تعیناتی سے قبل  وہ اوسلو، ناروے، میں واقع امریکی سفارتخانہ میں قائم مقام ناظم الامور کے عہدے پر خدمات سرانجام دے رہے تھے۔  قونصل جنرل رائیلی نے اپنے وسیع سفارتی کیریئر کے دوران کابل میں امریکی سفارتخانہ میں بطور معاون چیف آف مشن کے طور پر کام کیا ہے ۔ وہ  اس  سے  پہلے بھی دوبار افغانستان میں تعینات رہ چکے ہیں۔

امریکی محکمہ خارجہ میں ان کی دیگر اعلیٰ ذمہ داریوں میں صنعاء ، یمن، میں ۲۰۱۵ء-۲۰۱۷ ء کے دوران بطور نائب سربراہ مشن اور ۲۰۱۲ء-۲۰۱۵ء کے دوران ہیلی فیکس، نووا اسکوٹیا، کینیڈا میں بطور پرنسپل آفیسر(قونصل جنرل برائے اٹلانٹک کینیڈا) تقرری شامل ہے۔

وہ عراق میں دو مرتبہ تعینات رہے؛  ۲۰۰۶ء سے ۲۰۰۷ء تک صوبہ ناصریہ میں امریکی-اطالوی پی آرٹی  کے لیڈر ، اور بعد ازاں ۲۰۰۷ء  سے  ۲۰۰۸ء تک  انھوں نےبغداد میں واقع امریکی سفارتخانہ میں بطور سینئر کوآرڈینیٹر برائے جمہوریت وانسانی حقوق  فرائض انجام دیئے۔

امریکی فارن سروس میں اپنے ۲۹ سالہ کیریئر کے دوران  انہوں نے محکمہ خارجہ کے مصر اور لیوانت کے امور کے دفتر میں بطور ڈپٹی ڈائریکٹر کے کام کیا،جہاں انہوں نے ۲۰۰۹ء سے ۲۰۱۰ء کے دوران مصر، اردن ، شام اور لبنان کے حوالے سے امریکی خارجہ پالیسی میں رہنمائی فراہم  کی۔ اس کے علاوہ  انہوں نے ۲۰۰۸ء سے ۲۰۰۹ء تک واشنگٹن ڈی سی میں نیشنل وار کالج  میں ایک تعلیمی سال  گزارا  اوراعزاز کے ساتھ گریجویشن مکمل کیا۔ رائیلی نے پشتو، مینڈیرین چینی، عربی اور روسی زبانیں پڑھیں۔

فارن سروس میں شمولیت اختیار کرنے سے قبل ، قونصل جنرل رائیلی  نجی شعبہ  سے وابستہ رہے  جس میں چار سال انہوں نے ہانگ کانگ میں بوسٹن کنسلٹنگ گروپ کے ساتھ بطور اسٹریٹجی کنسلٹنٹ اور سان فرانسسکو میں پرائس واٹر ہاؤس کوپرز میں کام کیا۔

قونصل جنرل رائیلی نے ہارورڈ بزنس اسکول سے ایم بی اے ، نیشنل ڈیفنس یونیورسٹی سے بین الاقوامی سیکورٹی اسٹریٹیجی میں ایم ایس اور جارجیا یونیورسٹی ،ایتھنز، سے بی بی اے کررکھاہے۔